Ticker

6/recent/ticker-posts

Famous Urdu Poetry John Elia

Poetry in Urdu 2 Lines

John Elia Poetry in Urdu



حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی


حالت حال کے سبب حالت حال ہی گئی
 شوق میں کچھ نہیں گیا شوق کی زندگی گئی

 تیرا فراق جان جان عیش تھا کیا میرے لیے 
یعنی تیرے فراق میں خوب شراب پی گئی . . . 

تیرے وصال کے لیے اپنے کمال کے لیے
 حالت دِل كے تھی خراب اور خراب کی گئی

 ایک ہی حادثہ تو ہے اور وہ یہ كے آج تک
 بات نہیں کہی گئی بات نہیں سنی گئی

 بعد بھی تیرے جان جان دِل میں رہا عجب سامان
 یاد رہی تیری یہاں پِھر تیری یاد بھی گئی

 اس کے بدن کو دی نمود ہم نے سخن میں اور پِھر
 اس کے بدن کے واسطے ایک کعبہ بھی سی گئی

 سحن خیال یار میں کی نا بسر شب فراق
 جب سے وہ چاندنا گیا جب سے وہ چاندنی گئی

 نشہ شوق رنگ میں تجھ سے جدائی کی گئی
 اک لکیر خون کی بیچ میں کھینچ دی گئی

 تھی جو کبھی سَر سخن میری وہ خاموشی گئی
 ہائے کہاں سنن کی بات ، ہائے وہ بیٹ ہی گئی

 شوق کی ایک عمر میں کیسے بَدَل سکے گا دِل
 نبز جنون ہی تو تھی شہر میں ڈوبتی گئی

 اس کی گلی سے اٹھ کے میں آن پڑا تھااپنے گھر
 اک گلی کی بات تھی اور گلی گلی گئی

 اس کی امید ناز کا ہم سے یہ مان تھا کے آپ
 عمر گزار دیجیئے ، عمر گزار دی گئی

 دوڑ با دوڑ ، دِل با دِل ، درد با درد ، دم با دم
 تیرے یہاں ری´ایات حال نہیں رکھی گئی

 جاؤں جنوب زَرْد کے خاک بسر یہ دکھ اٹھا
 موج شمیال سبز جان آئی تھی اور چلی گئی

 کیا وہ گمان نہیں رہا ؟ ہاں وہ گمان نہیں رہا
 کیا وہ امید بھی گئی ؟ ہاں وہ امید بھی گئی

 بات کوئی امید کی مجھ سے نہیں کہی گئی 
سو میرے خواب بھی گئے ، سو میری نیند بھی گئی

 جانیے کیا تلاش تھی جاؤں میرے وجود میں
 جس کو میں ڈھونڈتا گیا ، جو مجھے ڈھونڈتی گئی

 اک خوشی کا حال ہے خوش-سوخانان کے درمیان
 عزت شاایقین غم تھی جو رہی سہی گئی

 جب میں تھا شہر ذات کا تھا میرا ہر نفس عذاب
 پِھر میں وہاں کا تھا جہاں حالت ذات بھی گئی

 تم نئے بہت شراب پی اِس کا سبھی کو دکھ ہے جاؤں
 اور جو دکھ ہے وہ یہ ہے تم کو شراب پی گئی

 جان تیرے فراق میں شام سے شب جو کی گئی
 خوب شراب پی گئی اور خراب پی گئی

 شکوہ جو ہے تو اِس کا ہے شکوہ نہیں کیا گیا
 رنج جو ہے تو اِس کا ہے بات فقط سہی گئی

 سود زایان تو خیر کیا ان کی تمیز ہے عجب
 ویسے اسی تمیز میں اپنی تو زندگی گئی

 جس کا سرود روشنی محفل شب فروز تھا
 اس دِل داغ زار سے اپنی ہی روشنی گئی


Haalat-e-haal kay sabab haalat-e-haal hi gaii


Haalat-e-haal kay sabab haalat-e-haal hi gaii
Shouq men kuchh nahin gaya shauq ki zindagii gaii

Tera firaaq jaan-e-jaaN aish tha kya meray liye
Yaani teray firaaq meiN khoob sharaab pii gaii
...
Teray wisaal kay liye apnay kamaal kay liye
Haalat-e-dil ke thi kharab aur kharab ki gaii

Aik hi hadisa to hai aur wo ye ke aaj tak
Baat nahin kahi gaii baat nahin sunii gaii

Baad bhi teray jaan-e-jaaN dil mein raha ajab samaan
Yaad rahi teri yahan phir teri yaad bhii gaii

Us kay badan ko dii namood hum ne sukhan men or phir
Us kay badan kay waastay aik Qabaa bhi sii gaii

Sehn-e-khayal-e-yaar men ki na basar shab-e-firaaq
Jab say woh chandna gaya jab say woh chandni gaii

Nasha-e-shauq-e-rang men tujh say judaai ki gaii
Ek lakeer khoon ki beech men kheench di gaii

Thi jo kabhi sar-e-sukhan meri woh khaamoshi gaii
Haaye kahan sunan ki baat, haaye woh bat hi gaii

Shauq ki aik umr men kaisay badal sakay ga dil
Nabz-e-junoon hi to thi sheher men Doobti gaii

Us ki galii se uth kay Main aan para thaapnay ghar
Ek galii ki baat thi aur gali gali gaii

Us ki umeed-e-naaz ka hum say yeh maan tha kay aap
Umr guzaar dijiye, umr guzaar di gaii

Daur ba daur, dil ba dil, dard ba dard, dam ba damm
Teray yahan ri´ayat-e-haal nahin rakhi gaii

Jaun junoob-e-zard kay khaak basar yeh dukh uThha
Mauj-e-shmial-e-sabz-e-jaan aai thi aur chali gaii

Kya woh gumaan nahin raha? haan woh gumaN nahin raha
Kya woh umeed bhi gaii? haan woh umeed bhi gaii

Baat koi umeed ki mujh say nahin kahi gaii
So meray khwab bhi gaye, so meri neend bhi gaii

Jaaniye kya talaash thi Jaun meray wujood men
Jis ko Main Dhoondta gaya, jo mujhay Dhoondti gaii

Ek khushi ka haal hai khush-sukhanan kay darmyaan
Izaat-e-shaaiqeen-e-gham thi jo rahi sahi gaii

Jab Main tha shehr-e-zaat ka tha mera har nafas azaab
Phir Main wahan ka tha jahan haalat-e-zaat bhi gaii

Tum nay bohot sharaab pii is ka sabhi ko dukh hai Jaun
Aur jo dukh hai woh ye hai tum ko sharaab pii gaii

Jaan teray firaaq men shaam say shab jo ki gaii
Khuub sharaab pii gaii aur kharaab pii gaii

Shikwa jo hai to is ka hai shikwa nahin kiya gaya
Ranj jo hai to is ka hai baat faqat sahi gaii

Sood-o-zayaan to khair kya in ki tameez hai ajab
Waisay isi tameez men apni to zindagi gaii

Jis ka surood-e-roshni mehfil-e-shab faroz tha
Us dil-e-daagh zaar say apni hi roshni gaii...!!



For More John Elia Poetry :