Ticker

6/recent/ticker-posts

John Elia Urdu Ghazal Poetry

Poetry in Urdu 2 Lines

John Elia Poetry in Urdu


 سفر کے وقت 

تمہاری یاد مرے دل کا داغ ہے لیکن
 سفر کے وقت تو بے طرح یاد آتی ہو
 برس برس کی ہو عادت کا جب حساب تو پھر

 بہت ستاتی ہو جانم بہت ستاتی ہو
 میں بھول جاؤں مگر کیسے بھول جاؤں بھلا
 عذاب جاں کی حقیقت کا اپنی افسانہ
 مرے سفر کے وہ لمحے تمہاری پر حالی
 وہ بات بات مجھے بار بار سمجھانا

 یہ پانچ کرتے ہیں دیکھو یہ پانچ پاجامے
 ڈلے ہوئے ہیں کمر بند ان میں اور دیکھو
 یہ شیو بکس ہے اور یہ ہے اولڈ اسپائس
 نہیں حضور کی جھونجل کا اب کوئی باعث

 یہ ڈائری ہے اور اس میں پتے ہیں اور نمبر
 اسے خیال سے بکسے کی جیب میں رکھنا
 ہے عرض ''حضرت غائب دماغ'' بندی کی
 کہ اپنے عیب کی حالت کو غیب میں رکھنا

 یہ تین کوٹ ہیں پتلون ہیں یہ ٹائیاں ہیں
 بندھی ہوئی ہیں یہ سب تم کو کچھ نہیں کرنا
 یہ ویلیمؔ ہے اونٹلؔ ہے اور ٹرپٹیؔ نال
 تم ان کے ساتھ مری جاں ڈرنک سے ڈرنا

 بہت زیادہ نہ پینا کہ کچھ نہ یاد آئے
 جو لکھنؤ میں ہوا تھا وہ اب دوبارہ نہ ہو
 ہو تم سخن کی انا اور تمکنت جانم
 مذاق کا کسی انشاؔ کو تم سے یارا نہ ہو

 وہ جونؔ جو نظر آتا ہے اس کا ذکر نہیں
 تم اپنے جونؔ کا جو تم میں ہے بھرم رکھنا
 عجیب بات ہے جو تم سے کہہ رہی ہوں
 میں خیال میرا زیادہ اور اپنا کم رکھنا
 ہو تم بلا کے بغاوت پسند تلخ کلام
 خود اپنے حق میں اک آزار ہو گئے ہو تم
 تمہارے سارے صحابہ نے تم کو چھوڑ دیا
 مجھے قلق ہے کہ بے یار ہو گئے ہو تم

 یہ بینک کار منیجر یہ اپنے ٹیکنوکریٹ
 کوئی بھی شبہ نہیں ہیں یہ ایک عبث کا ٹھٹھول
 میں خود بھی ان کو کرومیگنن سمجھتی ہوں
 یہ شاندار جناور ہیں دفتروں کا مخول

 میں جانتی ہوں کہ تم سن نہیں رہے مری
 بات سماج جھوٹ سہی پھر بھی اس کا پاس کرو
 ہے تم کو طیش ہے بالشتیوں کی یہ دنیا
 تو پھر قرینے سے تم ان کو بے لباس کرو

 تم ایک سادہ و برجستہ آدمی ٹھہرے
 مزاج وقت کو تم آج تک نہیں سمجھے
 جو چیز سب سے ضروری ہے وہ میں بھول گئی
 یہ پاسپورٹ ہے اس کو سنبھال کے رکھنا
 جو یہ نہ ہو تو خدا بھی بشر تک آ نہ سکے
 سو تم شعور کا اپنے کمال کر رکھنا

 مری شکست کے زخموں کی سوزش جاوید
 نہیں رہا مرے زخموں کا اب حساب کوئی
 ہے اب جو حال مرا وہ عجب تماشا ہے
 مرا عذاب نہیں اب مرا عذاب کوئی

 نہیں کوئی مری منزل پہ ہے سفر درپیش
 ہے گرد گرد عبث مجھ کو در بہ در پیش


Safar Kay Waqt

tumhari yaad marey dil ka daagh hai lekin
safar ke waqt to be terhan yaad aati ho
baras baras ki ho aadat ka jab hisaab to phir

bohat satati ho janum bohat satati ho
mein bhool jaoon magar kaisay bhool jaoon bhala
azaab jaan ki haqeeqat ka apni afsana
marey safar ke woh lamhay tumhari par haali
woh baat baat mujhe baar baar samjhaana

yeh paanch karte hain dekho yeh paanch pajamay
dalay hue hain kamar band un mein aur dekho
yeh shave box hai aur yeh hai old spice
nahi huzoor ki jhonjal ka ab koi baais

yeh diary hai aur is mein pattay hain aur number
usay khayaal se baksay ki jaib mein rakhna
hai arz' ' hazrat gayab dimagh' ' bandi ki
ke –apne aib ki haalat ko ghaib mein rakhna

yeh teen coat hain patlon hain yeh taiyan hain
bandhi hui hain yeh sab tum ko kuch nahi karna
yeh william hai ontal hai aur tarpati naal
tum un ke sath meri jaan drink se darna

bohat ziyada nah piinaa ke kuch nah yaad aaye
jo lkhno mein sun-hwa tha woh ab dobarah nah ho
ho tum sukhan ki anaa aur Tamkanat janum
mazaaq ka kisi insha ko tum se yaara nah ho

woh John jo nazar aata hai is ka zikar nahi
tum –apne John ka jo tum mein hai bharam rakhna
ajeeb baat hai jo tum se keh rahi hon
mein khayaal mera ziyada aur apna kam rakhna
ho tum bulaa ke baghaawat pasand talkh kalaam
khud –apne haq mein ik azaar ho gaye ho tum
tumahray saaray sahaba ne tum ko chore diya
mujhe qlq hai ke be yaar ho gaye ho tum

yeh bank car manager yeh –apne tiknokrit
koi bhi shuba nahi hain yeh aik abs ka thithol
mein khud bhi un ko cro-magnon samjhti hon
yeh shandaar janwar hain dftron ka mkhol

mein janti hon ke tum sun nahi rahay meri
baat samaaj jhoot sahi phir bhi is ka paas karo
hai tum ko taish hai balishtiyon ki yeh duniya
to phir qareene se tum un ko be libaas karo

tum aik saada o barjasta aadmi thehray
mizaaj waqt ko tum aaj tak nahi samjhay
jo cheez sab se zaroori hai woh mein bhool gayi
yeh passport hai is ko sambhaal ke rakhna
jo yeh nah ho to kkhuda bhi bashar tak aa nah sakay
so tum shaoor ka –apne kamaal kar rakhna

meri shikast ke zakhamo ki soozish Javed
nahi raha marey zakhamo ka ab hisaab koi
hai ab jo haal mra woh ajab tamasha hai
mra azaab nahi ab mra azaab koi

nahi koi meri manzil pay hai safar darpaish
hai gird gird abs mujh ko dar bah dar paish



For More John Elia Poetry :

Best Jaun Elia 2 Lines