Ticker

6/recent/ticker-posts

Attitude Poetry in Urdu 2 Lines Text

Poetry in urdu 2 Lines

Allama Iqbal Best Poetry in Urdu


زہد اور رندی

اک مولوی صاحب کی سناتا ہوں کہانی
 تیزی نہیں منظور طبیعت کی دکھانی

 شہرہ تھا بہت آپ کی صوفی منشی کا
 کرتے تھے ادب ان کا اعالی و ادانی

 کہتے تھے کہ پنہاں ہے تصوف میں شریعت
 جس طرح کہ الفاظ میں مضمر ہوں معانی

 لبریز مئ زہد سے تھی دل کی صراحی
 تھی تہہ میں کہیں درد خیال ہمہ دانی

 کرتے تھے بیاں آپ کرامات کا اپنی
 منظور تھی تعداد مریدوں کی بڑھانی

 مدت سے رہا کرتے تھے ہمسائے میں میرے
 تھی رند سے زاہد کی ملاقات پرانی 

 حضرت نے مرے ایک شناسا سے یہ پوچھا
 اقبالؔ کہ ہے قمرئ شمشاد معانی

 پابندئ احکام شریعت میں ہے کیسا
 گو شعر میں ہے رشک کلیم ہمدانی

 سنتا ہوں کہ کافر نہیں ہندو کو سمجھتا
 ہے ایسا عقیدہ اثر فلسفہ دانی

 ہے اس کی طبیعت میں تشیع بھی ذرا سا
 تفضیل علی ہم نے سنی اس کی زبانی

 سمجھا ہے کہ ہے راگ عبادات میں داخل
 مقصود ہے مذہب کی مگر خاک اڑانی

 کچھ عار اسے حسن فروشوں سے نہیں ہے
 عادت یہ ہمارے شعرا کی ہے پرانی

 گانا جو ہے شب کو تو سحر کو ہے تلاوت
 اس رمز کے اب تک نہ کھلے ہم پہ معانی

 لیکن یہ سنا اپنے مریدوں سے ہے میں نے
 بے داغ ہے مانند سحر اس کی جوانی

 مجموعۂ اضداد ہے اقبالؔ نہیں ہے
 دل دفتر حکمت ہے طبیعت خفقانی

 رندی سے بھی آگاہ شریعت سے بھی واقف
 پوچھو جو تصوف کی تو منصور کا ثانی

 اس شخص کی ہم پر تو حقیقت نہیں کھلتی
 ہوگا یہ کسی اور ہی اسلام کا بانی

 القصہ بہت طول دیا وعظ کو اپنے
 تا دیر رہی آپ کی یہ نغز بیانی

 اس شہر میں جو بات ہو اڑ جاتی ہے سب میں
 میں نے بھی سنی اپنے احبا کی زبانی

 اک دن جو سر راہ ملے حضرت زاہد
 پھر چھڑ گئی باتوں میں وہی بات پرانی

 فرمایا شکایت وہ محبت کے سبب تھی
 تھا فرض مرا راہ شریعت کی دکھانی

 میں نے یہ کہا کوئی گلہ مجھ کو نہیں ہے
 یہ آپ کا حق تھا ز رہ قرب مکانی

 خم ہے سر تسلیم مرا آپ کے آگے
 پیری ہے تواضع کے سبب میری جوانی

 گر آپ کو معلوم نہیں میری حقیقت
 پیدا نہیں کچھ اس سے قصور ہمہ دانی

 میں خود بھی نہیں اپنی حقیقت کا شناسا
 گہرا ہے مرے بحر خیالات کا پانی

 مجھ کو بھی تمنا ہے کہ اقبالؔ کو دیکھوں
 کی اس کی جدائی میں بہت اشک فشانی

 اقبالؔ بھی اقبالؔ سے آگاہ نہیں ہے
 کچھ اس میں تمسخر نہیں واللہ نہیں ہے

Zuhad aur rndi

ik molvi sahib ki sunataa hon kahani
taizi nahi Manzoor tabiyat ki dikhani

Shahrah tha bohat aap ki sufi munshi ka
karte thay adab un ka اعالی o ادانی

kehte thay ke panhan hai tasawuf mein Shariat
jis terhan ke alfaaz mein Muzmer hon ma-ani

labraiz mai Zuhad se thi dil ki suraahi
thi teh mein kahin dard khayaal hama daani

karte thay bayan aap karamaat ka apni
Manzoor thi tadaad mureedon ki brhhani

muddat se raha karte thay hamsaye mein mere
thi rind se Zahid ki mulaqaat purani

hazrat ne marey aik shanasa se yeh poocha
اقبالؔ ke hai قمرئ Shamshad ma-ani

پابندئ ehkaam Shariat mein hai kaisa
go shair mein hai rashk claim Hamdani

santa hon ke kafir nahi hindu ko samjhta
hai aisa aqeedah assar falsafah daani

hai is ki tabiyat mein tashee bhi zara sa
Tafzeel Ali hum ne suni is ki zabani

samjha hai ke hai raag ebadaat mein daakhil
maqsood hai mazhab ki magar khaak urane

kuch aar usay husn faroshon se nahi hai
aadat yeh hamaray shura ki hai purani

gana jo hai shab ko to sehar ko hai tilawat
is ramz ke ab tak nah khulay hum pay ma-ani

lekin yeh suna –apne mureedon se hai mein ne
be daagh hai manind sehar is ki jawani

majmoa azdaad hai اقبالؔ nahi hai
dil daftar hikmat hai tabiyat خفقانی

rndi se bhi aagah Shariat se bhi waaqif
pucho jo tasawuf ki to mansoor ka sani

is shakhs ki hum par to haqeeqat nahi khulti
hoga yeh kisi aur hi islam ka baani

القصہ bohat tole diya waaz ko –apne
taa der rahi aap ki yeh نغز bayani

is shehar mein jo baat ho urr jati hai sab mein
mein ne bhi suni –apne احبا ki zabani

ik din jo sir raah miley hazrat Zahid
phir chhar gayi baton mein wohi baat purani

farmaya shikayat woh mohabbat ke sabab thi
tha farz mra raah Shariat ki dikhani

mein ne yeh kaha koi gilah mujh ko nahi hai
yeh aap ka haq tha zay reh qurb makani

khham hai sir tasleem mra aap ke agay
peeri hai tawaza ke sabab meri jawani

gir aap ko maloom nahi meri haqeeqat
peda nahi kuch is se qasoor hama daani

mein khud bhi nahi apni haqeeqat ka shanasa
gehra hai marey behar khayalat ka pani

mujh ko bhi tamanna hai ke اقبالؔ ko daikhon
ki is ki judai mein bohat asshk fashani

اقبالؔ bhi اقبالؔ se aagah nahi hai
kuch is mein tamaskhur nahi wallah nahi hai

For More Allama Iqbal Poetry :