Ticker

6/recent/ticker-posts

Maa Poetry in Urdu

Poetry in Urdu 2 Lines

Allama Iqba Poetry in Urdu


ماں کا خواب


میں سوئی جو اک شب تو دیکھا یہ خواب
 بڑھا اور جس سے مرا اضطراب

 یہ دیکھا کہ میں جا رہی ہوں کہیں
 اندھیرا ہے اور راہ ملتی نہیں

 لرزتا تھا ڈر سے مرا بال بال
 قدم کا تھا دہشت سے اٹھنا محال

 جو کچھ حوصلہ پا کے آگے بڑھی
 تو دیکھا قطار ایک لڑکوں کی تھی

 زمرد سی پوشاک پہنے ہوئے
 دیے سب کے ہاتھوں میں جلتے ہوئے

 وہ چپ چاپ تھے آگے پیچھے رواں
 خدا جانے جانا تھا ان کو کہاں

 اسی سوچ میں تھی کہ میرا پسر
 مجھے اس جماعت میں آیا نظر

 وہ پیچھے تھا اور تیز چلتا نہ تھا
 دیا اس کے ہاتھوں میں جلتا نہ تھا

 کہا میں نے پہچان کر میری جاں
 مجھے چھوڑ کر آ گئے تم کہاں

 جدائی میں رہتی ہوں میں بے قرار
 پروتی ہوں ہر روز اشکوں کے ہار

 نہ پروا ہماری ذرا تم نے کی
 گئے چھوڑ اچھی وفا تم نے کی

 جو بچے نے دیکھا مرا پیچ و تاب
 دیا اس نے منہ پھیر کر یوں جواب

 رلاتی ہے تجھ کو جدائی مری
 نہیں اس میں کچھ بھی بھلائی مری

 یہ کہہ کر وہ کچھ دیر تک چپ رہا
 دیا پھر دکھا کر یہ کہنے لگا

 سمجھتی ہے تو ہو گیا کیا اسے
 ترے آنسوؤں نے بجھایا اسے


Maa ka khawab

mein soi jo ik shab to dekha yeh khawab
barha aur jis se mra iztiraab

yeh dekha ke mein ja rahi hon kahin
andhera hai aur raah millti nahi

larazta tha dar se mra baal baal
qadam ka tha dehshat se uthna mahaal

jo kuch hosla pa ke agay barhi
to dekha qitaar aik larkoon ki thi

zumurud si poshak pehnay hue
diye sab ke hathon mein jaltay hue

woh chup chaap thay agay peechay rawan
kkhuda jane jana tha un ko kahan

isi soch mein thi ke mera pasar
mujhe is jamaat mein aaya nazar

woh peechay tha aur taiz chalta nah tha
diya is ke hathon mein jalta nah tha

kaha mein ne pehchan kar meri jaan
mujhe chore kar aa gaye tum kahan

judai mein rehti hon mein be qarar
proti hon har roz ashkon ke haar

nah parwa hamari zara tum ne ki
gaye chore achi wafa tum ne ki

jo bachay ne dekha mra paich o taab
diya is ne mun phair kar yun jawab

rulati hai tujh ko judai meri
nahi is mein kuch bhi bhalai meri

yeh keh kar woh kuch der tak chup raha
diya phir dikha kar yeh kehnay laga

samjhti hai to ho gaya kya usay
tre aanso-on ne bujhaaya usay

For More Allama Iqbal Poetry :