Ticker

6/recent/ticker-posts

Poetry in Urdu 2 Lines

Poetry in Urdu 2 Lines

Allama Iqba Poetry in Urdu


ایک گائے اور بکری


اک چراگہ ہری بھری تھی کہیں
 تھی سراپا بہار جس کی زمیں

 کیا سماں اس بہار کا ہو بیاں
 ہر طرف صاف ندیاں تھیں رواں

 تھے اناروں کے بے شمار درخت
 اور پیپل کے سایہ دار درخت

 ٹھنڈی ٹھنڈی ہوائیں آتی تھیں
 طائروں کی صدائیں آتی تھیں

 کسی ندی کے پاس اک بکری
 چرتے چرتے کہیں سے آ نکلی 

 جب ٹھہر کر ادھر ادھر دیکھا
 پاس اک گائے کو کھڑے پایا

 پہلے جھک کر اسے سلام کیا
 پھر سلیقے سے یوں کلام کیا

 کیوں بڑی بی مزاج کیسے ہیں
 گائے بولی کہ خیر اچھے ہیں

 کٹ رہی ہے بری بھلی اپنی
 ہے مصیبت میں زندگی اپنی

 جان پر آ بنی ہے کیا کہیے
 اپنی قسمت بری ہے کیا کہیے

 دیکھتی ہوں خدا کی شان کو میں
 رو رہی ہوں بروں کی جان کو میں

 زور چلتا نہیں غریبوں کا
 پیش آیا لکھا نصیبوں کا

 آدمی سے کوئی بھلا نہ کرے
 اس سے پالا پڑے خدا نہ کرے

 دودھ کم دوں تو بڑبڑاتا ہے
 ہوں جو دبلی تو بیچ کھاتا ہے

 ہتھکنڈوں سے غلام کرتا ہے
 کن فریبوں سے رام کرتا ہے

 اس کے بچوں کو پالتی ہوں میں
 دودھ سے جان ڈالتی ہوں میں

 بدلے نیکی کے یہ برائی ہے
 میرے اللہ تری دہائی ہے

 سن کے بکری یہ ماجرا سارا
 بولی ایسا گلہ نہیں اچھا

 بات سچی ہے بے مزہ لگتی
 میں کہوں گی مگر خدا لگتی

 یہ چراگہ یہ ٹھنڈی ٹھنڈی ہوا
 یہ ہری گھاس اور یہ سایہ

 ایسی خوشیاں ہمیں نصیب کہاں
 یہ کہاں بے زباں غریب کہاں

 یہ مزے آدمی کے دم سے ہیں
 لطف سارے اسی کے دم سے ہیں

 اس کے دم سے ہے اپنی آبادی
 قید ہم کو بھلی کہ آزادی

 سو طرح کا بنوں میں ہے کھٹکا
 واں کی گزران سے بچائے خدا

 ہم پہ احسان ہے بڑا اس کا 
ہم کو زیبا نہیں گلہ اس کا

 قدر آرام کی اگر سمجھو
 آدمی کا کبھی گلہ نہ کرو

 گائے سن کر یہ بات شرمائی
 آدمی کے گلے سے پچھتائی

 دل میں پرکھا بھلا برا اس نے
 اور کچھ سوچ کر کہا اس نے

 یوں تو چھوٹی ہے ذات بکری کی
 دل کو لگتی ہے بات بکری کی

Aik gaaye aur bakri

ik چراگہ hari bhari thi kahin
thi saraapaa bahhar jis ki zamee

kya samaa is bahhar ka ho bayan
har taraf saaf nadyaan theen rawan

thay اناروں ke be shumaar darakht
aur peepal ke saya daar darakht

thandhi thandhi hawae aati theen
طائروں ki sadayen aati theen

kisi nadi ke paas ik bakri
chrte chrte kahin se aa niklee

jab thehr kar idhar idhar dekha
paas ik gaaye ko kharray paaya

pehlay jhuk kar usay salam kya
phir saliqay se yun kalaam kya

kyun barri bi mizaaj kaisay hain
gaaye boli ke kher achay hain

kat rahi hai buri bhali apni
hai museebat mein zindagi apni

jaan par aa bani hai kya kahiye
apni qismat buri hai kya kahiye

dekhatii hon kkhuda ki shaan ko mein
ro rahi hon baaroon ki jaan ko mein

zor chalta nahi ghareebon ka
paish aaya likha naseeboon ka

aadmi se koi bhala nah kere
is se paala parre kkhuda nah kere

doodh kam dun to بڑبڑاتا hai
hon jo dubli to beech khata hai

hthkndon se ghulam karta hai
kin fareebon se raam karta hai

is ke bachon ko paalti hon mein
doodh se jaan daalti hon mein

badlay neki ke yeh buraiee hai
mere Allah tri dahai hai

sun ke bakri yeh maajra sara
boli aisa gilah nahi acha

baat sachhi hai be maza lagti
mein kahoon gi magar kkhuda lagti

yeh چراگہ yeh thandhi thandhi sun-hwa
yeh hari ghaas aur yeh saya

aisi khusihyan hamein naseeb kahan
yeh kahan be zuba ghareeb kahan

yeh mazay aadmi ke dam se hain
lutaf saaray isi ke dam se hain

is ke dam se hai apni abadi
qaid hum ko bhali ke azadi

so terhan ka banon mein hai khatka
wahn ki گزران se bachaaye kkhuda

hum pay ahsaan hai bara is ka
hum ko zaiba nahi gilah is ka

qader aaraam ki agar samjhoo
aadmi ka kabhi gilah nah karo

gaaye sun kar yeh baat sharmayi
aadmi ke gilaay se پچھتائی

dil mein parakhaa bhala bura is ne
aur kuch soch kar kaha is ne

yun to choti hai zaat bakri ki
dil ko lagti hai baat bakri ki

For More Allama Iqbal Poetry :