Ticker

6/recent/ticker-posts

Urdu Ghazal Poetry

Poetry in Urdu 2 Lines

Allama Iqbal Best Poetry in Urdu


سما سکتا نہیں پہنائے فطرت میں مرا سودا

سما سکتا نہیں پہنائے فطرت میں مرا سودا
 غلط تھا اے جنوں شاید ترا اندازۂ صحرا

 خودی سے اس طلسم رنگ و بو کو توڑ سکتے ہیں
 یہی توحید تھی جس کو نہ تو سمجھا نہ میں سمجھا

 نگہ پیدا کر اے غافل تجلی عین فطرت ہے
 کہ اپنی موج سے بیگانہ رہ سکتا نہیں دریا

 رقابت علم و عرفاں میں غلط بینی ہے منبر کی
 کہ وہ حلاج کی سولی کو سمجھا ہے رقیب اپنا

 خدا کے پاک بندوں کو حکومت میں غلامی میں 
 زرہ کوئی اگر محفوظ رکھتی ہے تو استغنا

 نہ کر تقلید اے جبریل میرے جذب و مستی کی
 تن آساں عرشیوں کو ذکر و تسبیح و طواف اولیٰ

 بہت دیکھے ہیں میں نے مشرق و مغرب کے مے خانے
 یہاں ساقی نہیں پیدا وہاں بے ذوق ہے صہبا

 نہ ایراں میں رہے باقی نہ توراں میں رہے باقی
 وہ بندے فقر تھا جن کا ہلاک قیصر و کسریٰ

 یہی شیخ حرم ہے جو چرا کر بیچ کھاتا ہے
 گلیم بوذر و دلق اویس و چادر زہرا

 حضور حق میں اسرافیل نے میری شکایت کی
 یہ بندہ وقت سے پہلے قیامت کر نہ دے برپا

 ندا آئی کہ آشوب قیامت سے یہ کیا کم ہے
 گرفتہ چینیاں احرام و مکی خفتہ در بطحا

 لبالب شیشۂ تہذیب حاضر ہے مے لا سے
 مگر ساقی کے ہاتھوں میں نہیں پیمانۂ الا

 دبا رکھا ہے اس کو زخمہ ور کی تیز دستی نے
 بہت نیچے سروں میں ہے ابھی یورپ کا واویلا

 اسی دریا سے اٹھتی ہے وہ موج تند جولاں بھی
 نہنگوں کے نشیمن جس سے ہوتے ہیں تہ و بالا 

 غلامی کیا ہے ذوق حسن و زیبائی سے محرومی
 جسے زیبا کہیں آزاد بندے ہے وہی زیبا

 بھروسا کر نہیں سکتے غلاموں کی بصیرت پر
 کہ دنیا میں فقط مردان حر کی آنکھ ہے بینا

 وہی ہے صاحب امروز جس نے اپنی ہمت سے 
 زمانے کے سمندر سے نکالا گوہر فردا

 فرنگی شیشہ گر کے فن سے پتھر ہو گئے پانی 
 مری اکسیر نے شیشے کو بخشی سختیٔ خارا

 رہے ہیں اور ہیں فرعون میری گھات میں اب تک
 مگر کیا غم کہ میری آستیں میں ہے ید بیضا

 وہ چنگاری خس و خاشاک سے کس طرح دب جائے
 جسے حق نے کیا ہو نیستاں کے واسطے پیدا 

 محبت خویشتن بینی محبت خویشتن داری
 محبت آستان قیصر و کسریٰ سے بے پروا

 عجب کیا گر مہ و پرویں مرے نخچیر ہو جائیں
 کہ بر فتراک صاحب دولتے بستم سر خود را

 وہ دانائے سبل ختم الرسل مولائے کل جس نے
 غبار راہ کو بخشا فروغ وادیٔ سینا

 نگاہ عشق و مستی میں وہی اول وہی آخر
 وہی قرآں وہی فرقاں وہی یٰسیں وہی طہٰ

 سنائیؔ کے ادب سے میں نے غواصی نہ کی ورنہ
 ابھی اس بحر میں باقی ہیں لاکھوں لولوئے لالا


Sama sakta nahi pahnaye fitrat mein mra soda

sama sakta nahi pahnaye fitrat mein mra soda
ghalat tha ae junoo shayad tra andaza sehraa

khudi se is tilsam rang o bo ko toar satke hain
yahi toheed thi jis ko nah to samjha nah mein samjha

ng_h peda kar ae ghaafil tajallii ain fitrat hai
ke apni mouj se begana reh sakta nahi darya

raqabat ilm o arfaan mein ghalat beeni hai minbar ki
ke woh Hilaj ki suli ko samjha hai raqeeb apna

kkhuda ke pak bundon ko hukoomat mein ghulami mein
zarah koi agar mehfooz rakhti hai to استغنا

nah kar taqleed ae Jibreel mere jazb o masti ki
tan aasan عرشیوں ko zikar o tasbeeh o tuwaf OVELY

bohat dekhe hain mein ne mashriq o maghrib ke me khanaay
yahan saqi nahi peda wahan be zouq hai Sehba

nah ایراں mein rahay baqi nah توراں mein rahay baqi
woh bande fiqr tha jin ka halaak qaisar o kasri

yahi Sheikh haram hai jo chura kar beech khata hai
Galim بوذر o دلق owais o chadar Zohra

huzoor haq mein Israfeel ne meri shikayat ki
yeh bandah waqt se pehlay qayamat kar nah day barpaa

nida aayi ke aashob qayamat se yeh kya kam hai
giriftaa chainian ahraam o muki Khaftah dar بطحا

labalab sheesha tahazeeb haazir hai me laa se
magar saqi ke hathon mein nahi pemana ila

daba rakha hai is ko zakhma war ki taiz dasti ne
bohat neechay suron mein hai abhi Europe ka waweela

isi darya se uthti hai woh mouj tund جولاں bhi
نہنگوں ke nashiman jis se hotay hain teh o baala

ghulami kya hai zouq husn o zebaaie se mehroomi
jisay zaiba kahin azad bande hai wohi zaiba

bhrosa kar nahi satke ghulamoo ki baseerat par
ke duniya mein faqat mardan Hur ki aankh hai Beena

wohi hai sahib amroz jis ne apni himmat se
zamane ke samandar se nikala gohar fardaa

farangi sheesha gir ke fun se pathar ho gaye pani
meri akseer ne sheeshay ko bakhsh سختیٔ Khaara

rahay hain aur hain firaon meri ghaat mein ab tak
magar kya gham ke meri آستیں mein hai ‫d Baiza

woh chingari khas o khashaak se kis terhan dab jaye
jisay haq ne kya ho نیستاں ke wastay peda

mohabbat خویشتن beeni mohabbat خویشتن daari
mohabbat Aastan qaisar o kasri se be parwa

ajab kya gir Meh o پرویں marey نخچیر ho jayen
ke Bar فتراک sahib dolatay بستم sir khud ra

woh danaye sabal khatam alrsl molaye kal jis ne
gubhar raah ko bakhsha farogh وادیٔ seena

nigah ishhq o masti mein wohi awwal wohi aakhir
wohi qraan wohi فرقاں wohi یسیں wohi taah

سنائیؔ ke adab se mein ne غواصی nah ki warna
abhi is behar mein baqi hain lakhoon لولوئے laala

For More Allama Iqbal Poetry :