Ticker

6/recent/ticker-posts

Ishq Poetry in Urdu

John Elia, known by his full name Syed Hussain Sibt-e-Asghar Naqvi, was a renowned Pakistani Urdu poet, scholar, and philosopher famous for his complex and often sad poems. Born on December 14, 1931, in India's Amroha - and dying on November 8, 2001, in Karachi, Pakistan, Poetry in Urdu 2 Lines

Poetry in Urdu 2 Lines

John Elia Poetry in Urdu


ضبط کر كے ہنسی کو بھول گیا


ضبط کر کے ہنسی کو بھول گیا 
میں تو اس زخم ہی کو بھول گیا 

ذات در ذات ہم سفر رہ کر 
اجنبی اجنبی کو بھول گیا 

صبح تک وجہ جاں کنی تھی جو بات 
میں اسے شام ہی کو بھول گیا 

عہد وابستگی گزار کے میں 
وجہ وابستگی کو بھول گیا 

سب دلیلیں تو مجھ کو یاد رہیں 
بحث کیا تھی اسی کو بھول گیا 

کیوں نہ ہو ناز اس ذہانت پر 
ایک میں ہر کسی کو بھول گیا 

سب سے پر امن واقعہ یہ ہے 
آدمی آدمی کو بھول گیا 

قہقہہ مارتے ہی دیوانہ 
ہر غم زندگی کو بھول گیا 

خواب ہا خواب جس کو چاہا تھا 
رنگ ہا رنگ اسی کو بھول گیا 

کیا قیامت ہوئی اگر اک شخص 
اپنی خوش قسمتی کو بھول گیا 

سوچ کر اس کی خلوت انجمنی 
واں میں اپنی کمی کو بھول گیا 

سب برے مجھ کو یاد رہتے ہیں 
جو بھلا تھا اسی کو بھول گیا 

ان سے وعدہ تو کر لیا لیکن 
اپنی کم فرصتی کو بھول گیا 

بستیو اب تو راستہ دے دو 
اب تو میں اس گلی کو بھول گیا 

اس نے گویا مجھی کو یاد رکھا 
میں بھی گویا اسی کو بھول گیا 

یعنی تم وہ ہو واقعی؟ حد ہے 
میں تو سچ مچ سبھی کو بھول گیا 

آخری بت خدا نہ کیوں ٹھہرے 
بت شکن بت گری کو بھول گیا 

اب تو ہر بات یاد رہتی ہے 
غالباً میں کسی کو بھول گیا 

اس کی خوشیوں سے جلنے والا جونؔ 
اپنی ایذا دہی کو بھول گیا 


Zabt Karke Hansi Ko Bhool Gaya

zabt kar ke hansi ko bhool gaya
mein to is zakham hi ko bhool gaya

zaat dar zaat hum safar reh kar
ajnabi ajnabi ko bhool gaya

subah tak wajah jaan kinny thi jo baat
mein usay shaam hi ko bhool gaya

ehad wabastagi guzaar ke mein
wajah wabastagi ko bhool gaya

sab daleelen to mujh ko yaad rahen
behas kya thi isi ko bhool gaya

kyun nah ho naz is zahanat par
aik mein har kisi ko bhool gaya

sab se par aman waqea yeh hai
aadmi aadmi ko bhool gaya

qehqeha maartay hi deewana
har gham zindagi ko bhool gaya

khawab ha khawab jis ko chaha tha
rang ha rang isi ko bhool gaya

kya qayamat hui agar ik shakhs
apni khush qismati ko bhool gaya

soch kar is ki khalwat انجمنی
wahn mein apni kami ko bhool gaya

sab buray mujh ko yaad rehtay hain
jo bhala tha isi ko bhool gaya

un se wada to kar liya lekin
apni kam فرصتی ko bhool gaya

بستیو ab to rasta day do
ab to mein is gali ko bhool gaya

is ne goya mujhi ko yaad rakha
mein bhi goya isi ko bhool gaya

yani tum woh ho waqai? had hai
mein to sach mach sabhi ko bhool gaya

aakhri buut kkhuda nah kyun thehray
buut shikan buut giri ko bhool gaya

ab to har baat yaad rehti hai
ghaliban mein kisi ko bhool gaya

is ki khoshion se julne wala جونؔ
apni aeza dahi ko bhool gaya


For More John Elia Poetry :