Ticker

6/recent/ticker-posts

Urdu Poetry John Elia

Poetry in Urdu 2 Lines

John Elia Poetry in Urdu


ابھی اک شور سا اٹھا ہے کہیں

ابھی اک شور سا اٹھا ہے کہیں 
کوئی خاموش ہو گیا ہے کہیں 

ہے کچھ ایسا کہ جیسے یہ سب کچھ 
اس سے پہلے بھی ہو چکا ہے کہیں 

تجھ کو کیا ہو گیا کہ چیزوں کو 
کہیں رکھتا ہے ڈھونڈھتا ہے کہیں 

جو یہاں سے کہیں نہ جاتا تھا 
وہ یہاں سے چلا گیا ہے کہیں 

آج شمشان کی سی بو ہے یہاں 
کیا کوئی جسم جل رہا ہے کہیں 

ہم کسی کے نہیں جہاں کے سوا 
ایسی وہ خاص بات کیا ہے کہیں 

تو مجھے ڈھونڈ میں تجھے ڈھونڈوں 
کوئی ہم میں سے رہ گیا ہے کہیں 

کتنی وحشت ہے درمیان ہجوم 
جس کو دیکھو گیا ہوا ہے کہیں 

میں تو اب شہر میں کہیں بھی نہیں 
کیا مرا نام بھی لکھا ہے کہیں 

اسی کمرے سے کوئی ہو کے وداع 
اسی کمرے میں چھپ گیا ہے کہیں 

مل کے ہر شخص سے ہوا محسوس 
مجھ سے یہ شخص مل چکا ہے کہیں 


Abhi ik shor sa utha hai kahin


abhi ik shore sa utha hai kahin
koi khamosh ho gaya hai kahin

hai kuch aisa ke jaisay yeh sab kuch
is se pehlay bhi ho chuka hai kahin

tujh ko kya ho gaya ke cheezon ko
kahin rakhta hai dhoondta hai kahin

jo yahan se kahin nah jata tha
woh yahan se chala gaya hai kahin

aaj shamshaan ki si bo hai yahan
kya koi jism jal raha hai kahin

hum kisi ke nahi jahan ke siwa
aisi woh khaas baat kya hai kahin

to mujhe dhoond mein tujhe dhundon
koi hum mein se reh gaya hai kahin

kitni wehshat hai darmiyan hajhoom
jis ko dekho gaya sun-hwa hai kahin

mein to ab shehar mein kahin bhi nahi
kya mra naam bhi likha hai kahin

isi kamray se koi ho ke vidaa
isi kamray mein choup gaya hai kahin

mil ke har shakhs se sun-hwa mehsoos
mujh se yeh shakhs mil chuka hai kahin

For More John Elia Poetry :